Sunday, September 25, 2022
Homeشاعریمحبت بمقابلہ انا 

محبت بمقابلہ انا 

ہانیہ ارمیا

ماضی کو دفنا کر

اپنے اپنے حال میں

خوش وہ بھی نہیں

خوش میں بھی نہیں

سرِ راہ ملاقات تھی

کل رات مگر

رکا وہ بھی نہیں

ٹھہری میں بھی نہیں

پنی اپنی الجھنوں میں

مگن ہیں دونوں مگر

کھیل محبت کا

بھولا وہ بھی نہیں

بھولی میں بھی نہیں

بلا کی ضد تھی اس میں

انا میری بھی گہری تھی

انا اور ضد کی جنگ میں

جیتا وہ بھی نہیں

ہاری میں بھی نہیں

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Advertisingspot_img

Popular posts

My favorites

I'm social

0FansLike
0FollowersFollow
3,501FollowersFollow
0SubscribersSubscribe